Published On: Mon, Apr 20th, 2015

چین کی نئی شاہراہِ ریشم: پاکستان کو کتنا فائدہ ہو گا؟

Share This
Tags
کیا پاکستان کی بندرگاہ اور انفرا اسٹرکچر میں چین کی سرمایہ کاری جنوبی ایشیائی ممالک کو ایک دوسرے کے قریب لاسکتی ہے؟ چینی صدر ڑی جِن پنگ کے پاکستان کے دورے نے ایک پر امید احساس کو جنم دیا ہے۔
توانائی، تجارت اور سرمایہ کاری کے بڑے معاہدوں پر دستخط کرنے کے ساتھ ساتھ چینی صدر نے بلوچستان کی گوادر پورٹ، جو 3000 کلومیٹر طویل اسٹریٹجک پاک چین اقتصادی راہداری (CPEC) کا حصہ ہے، کا افتتاح بھی کیا جو کہ علاقائی تجارت، ترقی، اور سیاست کے زاویوں کو یکسر تبدیل کر سکتا ہے۔
گوادر 1958 میں پاکستان کو فروخت کیے جانے سے پہلے عمان کا حصہ تھا یہ صوبہ بلوچستان کے سب سے کم ترقی یافتہ اضلاع میں سے ایک ہے۔ اس کی جغرافیائی اہمیت یہ بھی ہے کہ یہ آبنائے ہرمز کے قریب خلیجِ فارس میں موجود ہے، جہاں سے دنیا کے تیل کا 40 فیصد حصہ گزرتا ہے۔2013 میں گوادر کے گہرے سمندر میں اربوں ڈالر کی اس بندرگاہ کی تعمیر اور اسے چلانے کا ٹھیکہ ایک چینی کمپنی کو دیا گیا تھا۔ بعض تجزیہ نگاروں کا ماننا ہے کہ یہ بندرگاہ بحرِ ہند میں چین کا بحری اڈہ بن سکتی ہے، اور بیجنگ کو بھارتی اور امریکی بحریہ کی سرگرمیوں کی نگرانی کرنے کے قابل کر دے گی۔
مئی 2013 میں پاکستان کے دورے کے دوران چینی وزیر اعظم لی چی چیانگ نے پاک چین اقتصادی راہداری (CPEC) کے قیام کی تجویز پیش کی تھی۔ لی نے اس وقت کہا تھا کہ ہمیں دونوں اطراف کے رابطوں، توانائی کی ترویج اور بجلی کی پیداوار کے ترجیحی منصوبوں پر توجہ مرکوز کرنا چاہیے۔
توانائی کے شعبے کے ماہر اور ماحولیاتی مشاورتی فرم ہیگلر بیلی پاکستان کے مینیجنگ ڈائریکٹر وقار ذکریا کا کہنا ہے کہ چین کے ساتھ پاکستان کے مضبوط سیاسی تعلقات ہونے کے باعث یہ قدم کامیاب ہوسکتا ہے۔ جبکہ دیگر خطوں کے توانائی کے منصوبے عدم تحفظ کے مسائل اور سیاسی اختلافات کی وجہ سے ختم ہوگئے۔انہوں نے کہا کہ پاک ایران گیس پائپ لائن رکی ہوئی ہے۔ عالمی بینک کے تعاون سے زیرِ تکمیل سینٹرل ایشیا ساؤتھ ایشیا الیکٹرسٹی ٹرانسمیشن اینڈ ٹریڈ پروجیکٹ کو افغانستان سے گزارنے کے لیے سلامتی کے خدشات کا سامنا ہے، جبکہ بھارت سے بجلی کی درآمد کے لیے دونوں ممالک کے درمیان بنیادی مسائل کے حل ہونے کا انتظار ہے۔
g5توانائی کی قلت میں مبتلا پاکستان کو یقینی طور پر چین کی صورت میں ایک مسیحا مل گیا ہے، جس نے وعدہ کیا ہے کہ وہ ان تاریک گھڑیوں میں (ملک کے کئی حصے ایک دن میں اٹھارہ گھنٹے تک بجلی کی کمی سے تکلیف اٹھاتے ہیں) ساتھ کھڑا ہے۔ پاکستانی صدر گہرے جذبات کے زیر اثر تھے کہ انہوں نے پیش گوئی کر ڈالی کہ اقتصادی راہداری اس “صدی کی اہم ترین تعمیر” ہوگی اور اس سے خطے میں اربوں لوگوں کو فائدہ پہنچے گا۔ذکریا کو یقین ہے کہ CPEC کے تحت چلنے والا منصوبہ پاکستان میں توانائی کی قلت کو پورا کردے گا اور طویل مدت میں بجلی کی پیداوار اور ترسیل دونوں میں واضح فرق لائے گا۔ تاہم مغربی عطیہ دہندگان سے توانائی کے منصوبوں کے لیے مالی مدد حاصل کرنے کے لیے جدوجہد کرتے، پیسوں کی تنگی کا شکار پاکستان کے لیے کوئلہ خاص اہمیت رکھتا ہے، جبکہ چینی سرمایہ بروقت اور مفید ہے۔
CPEC کے منصوبے میں پاکستان کے جنوب مغرب میں گوادر کی بندرگاہ کو چین کے مغربی علاقے سنکیانگ میں کاشغر سے ملانے کے لیے ایک 1800 کلومیٹر طویل ریلوے لائن، تیل کی پائپ لائنوں کا جال، اور نئی سڑکوں کی تعمیر بھی شامل ہے۔
g1اس منصوبے میں بندرگاہ پر ایک ہوائی اڈے کی تعمیر، توانائی کے منصوبوں کی ایک قطار، خصوصی اقتصادی زونز، خشک بندرگاہیں اور دیگر بنیادی ڈھانچے بھی شامل ہیں۔ متوقع تخمینہ لگائی گئی قیمت 75 ارب امریکی ڈالر ہے جن میں سے 45 ارب امریکی ڈالر 2020 تک راہداری کویقینی طور پر قابل استعمال بنانے کے ضامن ہوں گے۔ باقی سرمایہ کاری بجلی پیدا کرنے اور بنیادی ڈھانچے کی ترقی پر خرچ کی جائے گی۔
چین کی نئی شاہراہِ ریشم
اقتصادی اور توانائی کی راہداری پاکستان کے لیے ‘زبردست اہمیت کی حامل ہو سکتی ہے، جبکہ چین کے لیے یہ بہت سے طویل المدتی اقدامات میں سے صرف ایک ہے، جو کہ ملک کی عالمی اقتصادی طاقت میں اضافہ کرنے کے لیے ترتیب دیے گئے ہیں۔
ایک بہت زیادہ پرشکوہ منصوبہ نئی شاہراہِ ریشم ہے جو کہ وسط ایشیا کے ذریعے چین کو یورپ سے ملائے گا۔ اور بحری شاہراہِ ریشم بحر ہند اور جنوبی چین کے سمندر میں چین کی جہاز رانی کے راستے یقینی طورپر محفوظ بنائے گا۔
g2
بھارت اور امریکہ کی پریشانی
مائیکل کوگل مین کہتے ہیں کہ نئے شاہراہِ ریشم بیک وقت بھارت اور چین کے درمیان جاری مقابلے کو تیز کر دیں گے، جبکہ کچھ حد تک چین اور امریکہ کے درمیان وسیع تر سنٹرل ایشیاء کے خطے میں سرمایہ کاری کرنے اور اثرو رسوخ پیدا کرنے کو بھی فروغ دے سکتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ بھارت طویل عرصے سے وسطی ایشیا اور افغانستان میں توانائی کے اثاثوں پر نظریں جمائے ہوئے ہے جبکہ حالیہ برسوں میں ان میں سے بہت سے چین ہڑپ کرچکا ہے۔ امریکہ وسیع تر خطے میں اپنے شاہراہِ ریشم منصوبوں کا اعلان کرچکا ہے۔
بھارت پاکستان میں چین کی بڑھتی ہوئی سرمایہ کاری سے، خاص طور پر چین کے نئے ایٹمی ری ایکٹروں کو سرمایہ فراہم کرنے کے فیصلے سے فکر مند ہے۔ پاکستان 2023 تک چین کے مالی تعاون سے چار نئے جوہری پلانٹس کا اضافہ کرنے کا ارادہ رکھتا ہے اور آنے والے وقت میں مزید چار نئے جوہری پلانٹس کا اضافہ کیا جائے گا۔ (جس سے 2030 تک بجلی پیدا کرنے کی صلاحیت بڑھ کر 7,930 میگاواٹ ہوجائے گی)۔
بہت سے لوگ سوال اٹھاتے ہیں کہ چین نیوکلیئر سپلائر گروپ (این ایس جی) کے قواعد کی خلاف ورزی کرتے ہوئے پاکستان کو ایٹمی ٹیکنالوجی فراہم کر رہا ہے کیونکہ پاکستان نے ایٹمی عدم پھیلاؤ کے معاہدے پر دستخط نہیں کیے ہیں۔ اس کے جواب میں چین کا کہنا ہے کہ پاکستان کے ساتھ یہ منصوبے 2004 میں اس کے این ایس جی کے رکن بننے سے پہلے طے ہوچکے تھے۔
g3
بلوچستان کا تنازع
بہرحال اقتصادی راہداری کا گوادر میں اس وقت تک کامیاب ہونے کا امکان نہیں ہے جب تک یہاں امن نہ قائم ہوجائے۔ یہ ضلع عسکریت پسند تنظیموں، جیسے بلوچستان لبریشن فرنٹ، کے تنازعات میں الجھا ہوا ہے۔ یہ غیر ملکی سرمایہ کاری کو انتہائی مشکوک سمجھتے ہیں۔ یہ گروہ نہ صرف ترقیاتی منصوبوں کی سختی سے مخالفت کرتے ہیں، بلکہ بندرگاہ پر کام کرنے والے چینی انجینئروں پر حملے بھی کرتے رہے ہیں۔
ماہرین مقامی قانون سازوں کو راہداری کا زیادہ تر حصہ ملک کے دونوں انتشار زدہ علاقوں خیبر پختونخواہ اور بلوچستان سے ہٹا کر براستہ پنجاب کرنے کے لیے یہی وجوہات پیش کر رہے ہیں۔
ساتھ ہی ساتھ چین اپنے صوبے سنکیانگ، جس میں اوئیغور مسلمان بڑی تعداد میں آباد ہیں، میں پاکستانی مذہبی انتہا پسند گروہوں کے بڑھتے ہوئے اثرورسوخ کے بارے میں تشویش میں مبتلا ہے۔
اب پاکستانی فوج نے بارہ سو سیکورٹی اہلکاروں کو تربیت دینے کا منصوبہ بنایا ہے اور اقتصادی راہداری پر کام کرنے والے چینیوں کو تحفظ فراہم کرنے کے لیے ایک ’’خصوصی ڈویڑن‘‘ تشکیل دیا ہے۔ پاکستان بھر میں 210 منصوبوں پر کام کرنے والے 8100 سے زائد چینیوں کی حفاظت کے لیے 8000 سیکیورٹی اہلکاروں کو پہلے ہی تعینات کیا جا چکا ہے۔
ذوفین ابراہیم

Leave a comment

  • shylabark on بول ٹی وی کیخلاف سازش کا سکرپٹ سلطان علی لاکھانی نے لکھا، میر شکیل الرحمان اور میاں عامر محمود حصہ دار بنے ، بول کی بدنامی کے کئی پلانز باقی۔۔۔ نواز لیگ کے میڈیا سیل نے بھی حصہ ڈالا۔۔ حیران کن انکشافات
  • shylabark on بول ٹی وی کیخلاف سازش کا سکرپٹ سلطان علی لاکھانی نے لکھا، میر شکیل الرحمان اور میاں عامر محمود حصہ دار بنے ، بول کی بدنامی کے کئی پلانز باقی۔۔۔ نواز لیگ کے میڈیا سیل نے بھی حصہ ڈالا۔۔ حیران کن انکشافات
  • randisl3 on بول ٹی وی کیخلاف سازش کا سکرپٹ سلطان علی لاکھانی نے لکھا، میر شکیل الرحمان اور میاں عامر محمود حصہ دار بنے ، بول کی بدنامی کے کئی پلانز باقی۔۔۔ نواز لیگ کے میڈیا سیل نے بھی حصہ ڈالا۔۔ حیران کن انکشافات
  • jenaber on بول ٹی وی کیخلاف سازش کا سکرپٹ سلطان علی لاکھانی نے لکھا، میر شکیل الرحمان اور میاں عامر محمود حصہ دار بنے ، بول کی بدنامی کے کئی پلانز باقی۔۔۔ نواز لیگ کے میڈیا سیل نے بھی حصہ ڈالا۔۔ حیران کن انکشافات
  • billywelsh on بول ٹی وی کیخلاف سازش کا سکرپٹ سلطان علی لاکھانی نے لکھا، میر شکیل الرحمان اور میاں عامر محمود حصہ دار بنے ، بول کی بدنامی کے کئی پلانز باقی۔۔۔ نواز لیگ کے میڈیا سیل نے بھی حصہ ڈالا۔۔ حیران کن انکشافات