Published On: Wed, Aug 27th, 2014

سیاست میں نواز شریف کا نیا خفیہ ہتھیار۔۔۔

Share This
Tags
چوہدری سرور کئی بحرانوں میں نواز شریف کیلئے ’’ ٹرابل شوٹر‘‘ بن کر اُبھرے اور نواز شریف کو مشکل حالات سے نکالنے میں کامیاب رہے، کیا اس بار میں ایسا ہی ہو گا؟
خاور گھمن
آزادی اور انقلاب مارچوں کی طوالت کے بعد اچانک ملک کے نجی ٹی چینلز کو پاکستان تحریک انصاف کے رہنما اور حکومت کے درمیان مذاکرات کی خبر مل گئی جو ریڈ زون کے قریب واقع ایک فائیو اسٹار ہوٹل میں منعقد کی گئی تھی۔
فوج کی جانب سے مسئلے کے پرامن حل کی کال کے بعد ہونے والی اس ملاقات کا نتیجہ حیران کن نہیں تھا۔تاہم جب کانفرنس روم سے نکلتے ہوئے دونوں ٹیموں پر ٹی وی کیمروں کی نظر پڑی تو ایک شخص کی موجودگی زیادہ تر لوگوں کے لیے حیرت کا باعث بنی۔
وہ شخص گورنر پنجاب چوہدری محمد سرور تھے جنہوں نے پانچ رکنی حکومتی کمیٹی کی قیادت کی تھی جس میں کابینہ کے اراکین احسان اقبال، عبدالقادری بلوچ، پرویز رشید اور زاہد حامد شامل تھے۔
ہر کسی کے ذہن میں ایک ہی سوال تھا، چوہدری سرور ہی کیوں؟ حکمران جماعت میں موجود بیشتر تجربہ کار سیاست دانوں کی موجودگی کے باوجود انہیں ہی اس کام کے لیے کیوں منتخب کیا گیا؟
حالیہ عرصے میں سرور صاحب وزیراعظم کے لیے’’ٹرابل شوٹر‘‘کے طور پر ابھرے ہیں اور کئی مشکل حالات سے انہیں نکالنے میں بھی کامیاب رہے ہیں۔
یہ سرور ہی تھے جنہوں نے 23 جون کو طاہر القادری کو اسلام آباد کے بجائے لاہور میں اترنے کے لیے منایا۔انہوں نے ہی انہیں لاہور کے کور کمانڈر سے طاہر القادری کو چھوڑ نے کی درخواست کی کیوں کہ عوامی تحریک کے سربراہ کو خدشہ تھا کہ پنجاب حکومت انہیں نقصان پہنچانے کی کوشش کرے گی اور ان کی حفاظت فوج کرے۔
اب کیسے انہوں نے ڈاکٹر قادری کو گورنر کے اپنے قافلے میں سفر کرنے پر قائل کیا ؟یہ تاریخ کا حصہ بن چکا ہے لیکن ان کی مداخلت کی وجہ سے اس دن کا اختتام ڈرامائی انداز میں ہوا تھا۔
جب سے دارالحکومت کی جانب مارچ کا آغاز ہوا ہے، سرور صاحب دوبارہ سے زندہ ہوگئے ہیں۔ انہوں نے صحافیوں سے یوم آزادی کے موقع پر گفتگو کرتے ہوئے کہا تھا کہ انہوں نے اور متحدہ قومی موومنٹ کے قائد الطاف حسین نے ڈاکٹر قادری کو اسلام آباد میں مارچ کرنے کی اجازت دلوانے میں اہم کردار ادا کیا۔500
اب جب کہ دونوں مارچوں نے شاہراہ دستور پر اپنے قدم جمالیے ہیں، سرور صاحب کا ٹاسک مشکل تر ہوگیا ہے۔اب انہیں اس پیچیدہ صورت حال سے نمٹنے کے لیے راستہ تلاش کرنا ہوگا جس کی وجہ سے اسلام آباد اور روالپنڈی میں زندگی مفلوج ہوکر رہ گئی ہے۔
ایک تجزیہ کار کا کہنا تھا کہ دارالحکومت کے رہائشی براہ راست اس صورت حال سے متاثر ہور رہے ہیں تاہم ملک کے دیگر حصوں میں ٹیلی ویڑن اسکرینوں سے چپکے ہوئے لوگ شدت سے اس مسئلے کے حل کا انتظار کررہے۔
چوہدری سرور صاحب ہوئی عام آدمی نہیں۔ گلاسگو میں رہنے والے کروڑ پتی سرور صاحب نے اپنے خاندانی کیش اینڈ کیری کا کاروبار سنبھالا ۔سرور صاحب برطانوی ہاؤس آف کامنس کے رکن بھی رہ چکے ہیں جبکہ انہوں نے پارٹی لیڈر ٹونی بلیئر اور گورڈن براؤن کے ساتھ بھی کام کیا ہے۔ اسی دوران ان کے پاکستانی سیاست دانوں سے رابطے بڑھے۔
یہ کہا جاتا ہے کہ سرور صاحب نے شریف خاندان کی جلاوطنی کے دوران نہ صرف انہیں بہترین انداز میں رکھا بلکہ برطانیہ میں ان کا کاروبار مضبوط کرنے میں معاونت فراہم کی۔
ایک صحافی جنہوں نے لندن میں شریف خاندان کی جلاوطنی کو قریب سے دیکھا، نے تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ انہوں نے عملی طور پر اپنا’’ بٹوہ ‘‘ شریف خاندان کے ہاتھ میں رکھ دیا۔ متعدد افراد کا خیال ہے کہ انہیں اسی مہمان نوازی کا انعام گورنر پنجاب کے عہدے کے طور پر دیا گیا۔
درحقیقت سرور صاحب کا انتخاب اگست 2013 میں اچانک ہی سامنے آیا تھا۔ اپنے اس نئے کردار کو نبھانے کے لیے سرور صاحب کو اپنی برطانوی شہریت بھی ترک کرنا پڑی تھی۔تاہم تحریک انصاف کے ساتھ مذاکراتی ٹیم میں ان کی موجودگی نے متعدد سوالات کو جنم دیا۔
پی ٹی آئی کمیٹی کے ایک رکن کے مطابق جب ہمیں علم ہوا کہ چوہدری صاحب بھی حکومتی کمیٹی کا حصہ ہیں تو ہمیں لگا کہ یہاں بات وزیر داخلہ چوہدری نثار علی خان کی ہورہی ہے۔
ذرائع کا کہنا ہے کہ سرور صاحب کو ان کے برطانوی کنکشن کے باعث نواز شریف نے چیف مذاکرات کار بنایا۔
عمران خان کی سابق اہلیہ جمائمہ گولڈ اسمتھ برطانوی اسٹبلشمنٹ سے کافی قریب ہیں اور ادھر سرور صاحب بھی اپنا کردار ادا کرچکے ہیں۔
اس کے علاوہ اس بات میں کوئی راز نہیں کہ عمران خان کے برطانوی شاہی خاندان اور دیگر اہم برطانوی سیاست دانوں کے ساتھ روابط ہیں۔
پی ایم ایل ن کے رہنماؤں کا خیال ہے کہ سرور صاحب اپنے برطانوی کنکشن کے باعث ہی اس ٹیم کا حصہ ہیں ورنہ انہیں پاکستانی سیاست کا کم ہی علم ہے۔

 

Leave a comment

  • shylabark on بول ٹی وی کیخلاف سازش کا سکرپٹ سلطان علی لاکھانی نے لکھا، میر شکیل الرحمان اور میاں عامر محمود حصہ دار بنے ، بول کی بدنامی کے کئی پلانز باقی۔۔۔ نواز لیگ کے میڈیا سیل نے بھی حصہ ڈالا۔۔ حیران کن انکشافات
  • shylabark on بول ٹی وی کیخلاف سازش کا سکرپٹ سلطان علی لاکھانی نے لکھا، میر شکیل الرحمان اور میاں عامر محمود حصہ دار بنے ، بول کی بدنامی کے کئی پلانز باقی۔۔۔ نواز لیگ کے میڈیا سیل نے بھی حصہ ڈالا۔۔ حیران کن انکشافات
  • randisl3 on بول ٹی وی کیخلاف سازش کا سکرپٹ سلطان علی لاکھانی نے لکھا، میر شکیل الرحمان اور میاں عامر محمود حصہ دار بنے ، بول کی بدنامی کے کئی پلانز باقی۔۔۔ نواز لیگ کے میڈیا سیل نے بھی حصہ ڈالا۔۔ حیران کن انکشافات
  • jenaber on بول ٹی وی کیخلاف سازش کا سکرپٹ سلطان علی لاکھانی نے لکھا، میر شکیل الرحمان اور میاں عامر محمود حصہ دار بنے ، بول کی بدنامی کے کئی پلانز باقی۔۔۔ نواز لیگ کے میڈیا سیل نے بھی حصہ ڈالا۔۔ حیران کن انکشافات
  • billywelsh on بول ٹی وی کیخلاف سازش کا سکرپٹ سلطان علی لاکھانی نے لکھا، میر شکیل الرحمان اور میاں عامر محمود حصہ دار بنے ، بول کی بدنامی کے کئی پلانز باقی۔۔۔ نواز لیگ کے میڈیا سیل نے بھی حصہ ڈالا۔۔ حیران کن انکشافات